• صارفین کی تعداد :
  • 5844
  • 3/4/2014
  • تاريخ :

حضرت زينب س کي صفات

یتیموں کی رکھوالی اور حفاظت

جناب زينب ان تمام صفات کے ساتھ ساتھ فصاحت و بلاغت کي عظيم دولت و نعمت سے بھي بہر مند تھي زينب بنت علي تاريخ اسلام کے مثبت اور انقلاب آفريں کردار کا دوسرا نام هے صنف نازک کي فطري ذمہ داريوں کو پورا کرنے اور بني نوع آدم عليہ السلام کو حقيقت کي پاکيز ہ راہ دکھانے ميں جہاں مريم و آسيہ وہاجرہ و خديجہ اور طيب وطاہر صديقہ طاہر ہ فاطمہ زہرا سلام اللہ عليہم کي عبقري شخصيت اپنے مقدس کردار کي روشني ميں ہميشہ جبين تاريخ کي زينت بن کر نمونہ عمل ثابت هوئي هيں وہاں زينب بھي اپنے عظيم باپ کي زينت بنکر انقلاب کربلا کا پرچم اٹھائے هوئے آواز حق و باطل سچ و جھوٹ ايمان و کفر اور عدل وظلم کے درميان حد فاصل کے طور پر پہچاني جاتي هيں زينب نے اپنے عظيم کردار سے آمريت کو بے نقاب کيا ظلم و استبداد کي قلعي کھول دي دنيا کے زوال پزير حسن وجمال پر قربان هونے والوں کو آخرت کي ابديت نواز حقيقت کا پاکيزہ چہرہ ديکھا يا صبرو استقامت کا کوہ گراں بنکر علي عليہ السلام کي بيٹي نے ايسا کردار پيش کيا جس سے ارباب ظلم و جود کو شرمندگي اور ندامت کے سوا کچھ نہ مل سکا زينب کو علي و فاطمہ عليہما السلام کے معصوم کردار ورثے ميں ملے امام حسن عليہ السلام کا حسن و تدبير جہاں زينب کے احساس عظمت کي بنياد بنا وہاں امام حسين عليہ السلام کا عزم واستقلال علي عليہ السلام کي بيٹي کے صبر و استقامت کي روح بن گيا ، تاريخ اسلام ميں زينب نے ايک منفرد مقام پايا اور ايساعظيم کارنامہ سرانجام ديا جو رہتي دنياتک دنيائے انسانيت کے لئے مشعل راہ واسوہ حسنہ بن گيا-صلوات

زينب بنت علي(ع)تاريخ اسلام ميں اپني مخصوص انفراديت کي حامل هے اور واقعہ کربلا ميں آپ کے صبر شجاعانہ جہاد نے امام حسين عليہ السلام کے مقدس مشن کو تکميل يقيني بنايا آپ نے دين اسلام کي پاکيزہ تعليمات کا تحفظ وپاسداري ميں اپناکردار اس طرح ادا کيا کہ جيسے ابوطالب(ع)رسول اللہ (ص)کي پرورش ميں اپنے بھتيجے کے تحفظ کے لئے اپني اولاد کو نچھا ور کرنا پسند کرتے تھے کيونکہ ايک هي ہدف تھا کہ محمد بچ جائے وارث اسلام بچ جائے بالکل اسي طرح زينب کاحال هے کہ اسلام بچ جائے دين بچ جائے چاهے کوئي بھي قرباني ديني پڑے اسي لئے تاريخ ميں زينب کي قرباني کي مثال نهيں ملتي يہ شجاع کي بيٹي هے جس کي شجاعت کا لوہا بڑے بڑوں نے مانا تھا - ( جاري ہے )

 


متعلقہ تحریریں: